اسلامی مضامین کوختم کرنے والوں کے خلاف نوٹس

58

اسلامی مضامین کوختم کرنے والوں کے خلاف نوٹس

 

گورنر پنجاب چوہدری سرور نے نصاب میں اسلامی مضامین کے علاوہ اسلامی مضامین کوختم کرنے والوں کے خلاف نوٹس لے لیا۔

 

رپورٹ کے مطابق ، ان کی ہدایت پر محکمہ انسانی حقوق اور اقلیتی امور نے ایک رکنی کمیشن کی سفارشات پر عمل درآمد کرنے کا نوٹیفکیشن واپس لے لیا۔

 

چوہدری سرور نے شعیب سڈل کمیشن کی سفارشات پر فوری طور پر عملدرآمد روک دیا اور اس سلسلے میں ایک نیا نوٹیفکیشن جاری کیا گیا جس کے لئے مسلم اسکالرز نے گورنر پنجاب کا شکریہ ادا کیا۔

 

گذشتہ روز یہاں ایک اجلاس میں مسلم دینی اسکالروں سے گفتگو کرتے ہوئے چوہدری سرور نے کہا کہ نصاب سے اسلامی مواد نہیں ہٹایا جائے گا اور وہ اسلامی علوم کے موضوع تک ہی محدود نہیں رہیں گے۔

 

وزیر اعظم کے معاون خصوصی مولانا طاہر اشرفی ، چیئرمین رویت ہلال کمیٹی مولانا عبد الخبی آزاد نے اس اقدام پر گورنر پنجاب کا شکریہ ادا کیا۔

 

گورنر ہاؤس میں ہندوستان اور پاکستان میں کورونا وائرس کے درجات کے لئے خصوصی دعا بھی کی گئی۔

 

علامہ طاہر اشرفی ، مدینہ عبد الخبی آزاد ، فیڈریشن آف مدارس مولانا حنیف جالندھری ، جماعت اہلحدیث کے چیئرمین علامہ زبیر احمد ظہیر ، مفتی عاشق حسین ، جامعہ نعیمہ چیئرمین ڈاکٹر راگھیم چیئرمین رحمانیہ مولانا امجد خان ، نماز میں اسلامی نظریاتی کونسل (سی آئی آئی) کے رکن سعید حبیب الرحمن عرفانی موجود تھے۔

اسلامی مواد کے خارج ہونے پر تشویش کا اظہار

شرکاء نے پنجاب کے نصاب تعلیم میں اسلامی علوم کے علاوہ دیگر کتابوں سے اسلامی مواد کے خارج ہونے پر تشویش ک اظہار ا کیا۔

 

ایک میٹنگ کے دوران دینی علما نے اس معاملے میں ملوث عہدیداروں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ بھی کیا۔

 

کورونا وائرس کی حیثیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے ، پنجاب کے گورنر نے کہا کہ پاکستان نے ضرورت کی اس گھڑی میں بھارت کو مکمل تعاون کی پیش کش کی ہے۔

 

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے ہمیشہ اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ پرامن باہمی تعلقات کی حمایت کی ہے۔کیونکہاسلام ہمیں امن و امان قائم رکھنے کا حکم دیتا ہے،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.